اسلامی عسکری اتحاد رکن ممالک کی معاونت کرے گا، جنرل راحیل

سعودی عرب کے ولی عہد محمد بن سلمان نے سعودی سربراہی میں دہشت گردی کے خلاف مسلم اتحاد کے پہلے اعلیٰ سطحی اجلاس کا افتتاح کر دیا۔ اسلامک ملٹری کاؤنٹر ٹیرارزم کولیشن (آئی سی ایم سی ٹی سی) کے ‘دہشت گردی کے خلاف اتحاد’ کے عنوان سے افتتاحی اجلاس میں رکن ممالک کے وزراء دفاع نے حصہ لیا۔ پاک فوج کے سابق سربراہ اور عسکری اتحاد کے کمانڈر جنرل راحیل شریف نے اس موقع پر کہا کہ ‘ہمارے کئی رکن ممالک دہشت گرد تنظیموں کے خلاف لڑنے کے لیے مسلح فوج اور قانون نافذ کرنے والی ایجنسیوں کی صلاحیت میں کمی کے باعث شدید دباؤ میں ہیں’۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘آئی ایم سی ٹی سی رکن ممالک کو اپنی ریاستوں میں انسداد دہشت گردی کارروائی کے لیے خفیہ معلومات کی ترسیل اور صلاحیت کو بہتر بنانے میں معاونت کے لیے ایک پلیٹ فارم کے طور پر کردار ادا کرے گا’۔ سعودی ولی عہد محمد بن سلمان نے عسکری اتحاد کے وزراء دفاع اور دیگر اعلیٰ حکام سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ‘اس اجلاس سے ایک مضبوط اشارہ دیا گیا ہے کہ ہم ایک دوسرے کی مدد کے لیے رابطے اور متحد ہو کر کام کرنے جا رہے ہیں’۔  سعودی ولی عہد کا کہنا تھا کہ ‘اس دہشت گردی اور انتہا پسندی سے سب سے زیادہ خطرہ ہمارے مقدس دین کی مقبولیت کو ہے اس لیے ہم کسی کو ایسا کرنے کی اجازت نہیں دیں گے’۔ انھوں نے کہا کہ ‘ہم آج سے اس دہشت گردی کو ختم کرنے کا آغاز کرتے ہیں اور ہمیں مختلف پہلووں، دنیا اور بالخصوص مسلم ممالک سے اس کا خاتمہ نظر آتا ہے اور ہم اس کی شکست تک اپنی کوششوں کو جاری رکھیں گے’۔

یاد رہے کہ ’41 ملکی پان اسلامی اتحاد’ کے نام سے نئے اتحاد کا اعلان دسمبر 2015 میں کیا گیا تھا۔ پاکستان 34 ممالک کی ابتدائی فہرست میں شامل تھا جو اس اتحاد کا حصہ بننے پر متفق تھے۔ جنرل راحیل شریف اس اتحاد کے کمانڈر کے طور پر رواں سال اپریل میں شامل ہوئے تھے اور آئی ایم سی ٹی سی کے مطابق سابق آرمی چیف عسکری معاملات کو دیکھیں گے جس کا مقصد رابطوں، وسائل اور انسداد دہشت گردی کی کارروائیوں کے لیے عسکری منصوبہ بندی کے علاوہ اطلاعات کی محفوظ ترسیل اور فوجی صلاحیت اور قابلیت کو بڑھانے میں مدد کرنا ہے’۔ اسلامی عسکری اتحاد کے بنیادی مقاصد میں نظریات، مواصلات، انسداد دہشت گردی کے لیے مالی تعاون اور فوج کو شامل کیا گیا ہے۔

Advertisements

پاکستانی فوج : انڈیا ہمارا عزم آزمانا چاہتا ہے تو آزما لے اس کا نتیجہ وہ خود دیکھے گا

پاکستانی فوج کے ادارے آئی ایس پی آر کے ڈائریکٹر جنرل میجر جنرل آصف غفور نے کہا ہے کہ انڈیا کو جو چیز روک رہی ہے وہ ہماری قابل بھروسہ جوہری صلاحیت ہے تاہم وہ ہمارا عزم آزمانا چاہتا ہے تو آزما لے لیکن اس کا نتیجہ وہ خود دیکھے گا۔ پاکستان کے سرکاری ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے میجر جنرل آصف غفور نے کہا ‘چیف آف آرمی سٹاف ایک انتہائی اہم تقرری ہوتی ہے اور فور سٹار وہ رینک ہے جس میں تمام عمر کا تجربہ اور پختگی شامل ہوتی ہے، لہٰذا اس قسم کا غیر ذمہ دارانہ بیان اتنے اہم اور ذمہ دار عہدے والے افسر کو زیب نہیں دیتا ہے۔‘

ایک سوال کے جواب میں میجر جنرل آصف غفور نے کہا ‘انڈیا ہمارا عزم آزمانا چاہتا ہے تو آزما لے لیکن اس کا نتیجہ وہ خود دیکھے گا۔ پاکستان کی جوہری صلاحیت مشرق کی جانب سے آنے والے خطرات کے لیے ہے، جبکہ پاکستان کی جوہری صلاحیت حملے کے لیے نہیں بلکہ دفاع کے لیے ہے۔‘ ڈی جی آئی ایس پی آر نے پاکستان کو جوہری دھوکا کہنے کے انڈین آرمی چیف کے بیان کو بچکانہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ ایک ذمہ دار افسر کی جانب سے ایسا غیر ذمہ دارانہ بیان انتہائی نامناسب ہے۔

واضح رہے کہ انڈیا کے آرمی چیف نے ایک بیان میں کہا تھا کہ اگر حکومت نے حکم دیا تو انڈین آرمی سرحد پار کر کے پاکستان میں آپریشن کرنے سے نہیں ہچکچائے گی۔ ‘پاکستان کی جوہری صلاحیت ایک فریب ہے، اگر ہمیں واقعی پاکستانیوں کا سامنا کرنا پڑا اور ہمیں یہ ٹاسک دیا گیا تو ہمیں یہ نہیں کہیں گے کہ چونکہ پاکستان کے پاس جوہری ہتھیار ہیں اس لیے ہم سرحد پار نہیں کر سکتے۔‘ ڈی جی آئی ایس پی آر کا کہنا تھا ‘اگر انڈیا روایتی طریقوں سے پاکستان پر غالب آنے کی صلاحیت رکھتا تو اب تک ایسا کر چکا ہوتا، انڈیا کو جو چیز روک رہی ہے وہ ہماری قابل بھروسہ جوہری صلاحیت ہی ہے۔‘

میجر جنرل آصف غفور نے کہا ‘ہم ایک پیشہ ورانہ آرمی، ذمہ دار جوہری ریاست اور بیدار قوم ہیں، جو کسی فریب کا شکار نہیں ہے۔‘ دوسری جانب پاکستان کے وزیر خارجہ خواجہ آصف نے انڈین آرمی چیف کے بیان کو جوہری تصادم کو دعوت دینے کے برابر قرار دے دیا۔ سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر ٹویٹ کرتے ہوئے خواجہ آصف نے کہا ‘انڈین آرمی چیف نے انتہائی غیر ذمہ دارانہ بیان دیا جو ان کے عہدے کو زیب نہیں دیتا، تاہم اگر انڈیا کی خواہش ہے تو ہمارے عزم کو آزما لے، انشاء اللہ بھارتی جنرل کا شک دور کر دیا جائے گا۔’

کوئی طاقت پاکستان کا بال بیکا نہیں کر سکتی، آرمی چیف

پاک فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا ہے کہ دھمکانے والے سن لیں جس ملک میں عظیم والدین اور بہادر بیٹے ہوں کوئی بھی اس کا بال بیکا نہیں کر سکتا، ایسی فوج کا سربراہ ہوں جس کے جوان ہر دم وطن کیلئے جان دینے کو تیار ہیں، کوئی رقم ان بہادروں کی حب الوطنی اور قربانیوں کی قیمت نہیں چکا سکتی، ہمارے شہداء کی قربانیاں ہی ہمیں پر امن اور مستحکم پاکستان کی جانب لے جا رہی ہیں ۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے کرک کے علاقے گڑھ خیل میں مادر وطن پر 3 بیٹے اور 2 بھتیجے قربان کرنیوالے محمدعلی خان کے گھر آمد کے موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کیا اور انہیں زبردست خراج تحسین پیش کیا.

جبکہ اپنے دورہ شمالی وزیرستان میں آرمی چیف نے پاک افغان سرحد میں حال ہی میں تعمیر قلعوں اور نصب کی گئی آہنی باڑ کا جائزہ لیا اور میرانشاہ میں یادگار شہدأ پر حاضری دی اور پھولوں کی چادر چڑھائی۔ تفصیلات کے مطابق پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر ) کے مطابق پاک فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے شمالی وزیر ستان ایجنسی کا دورہ کیا اور میرانشاہ میں شہداء یادگار پر حاضری دی اور پھولوں کی چادر چڑھائی۔ جنرل آفیسر کمانڈنگ (جی او سی) میرانشاہ نے سلامتی کی صورتحال‘ عارضی طور پر نقل مکانی کرنے والے افراد کی بحالی کے لئے ایجنسی میں سماجی اقتصادی ترقی کے منصوبوں کے حوالے سے بریفنگ دی ۔

پاک فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے پاک افغان سرحد میں حال ہی میں تیار کیے گئے قلعوں اور نصب کی گئی آہنی باڑ کے جائزہ کے لئے دورہ کیا۔ جنرل قمر جاوید باجوہ نے سرحدی سکیورٹی کے لئے فارمیشن کی جانب سے تیز رفتاری کیلئے معیاری کام کرنے کے عمل کو سراہا۔ کور کمانڈر پشاور لیفٹیننٹ جنرل (ر) نذیر احمد بٹ بھی اس موقع پر موجود تھے ۔ بعد ازاں آرمی چیف شمالی وزیرستان کے دورے کے دوران کرک کے علاقے گڑھ خیل میں محمد علی خان کے گھر پہنچے، ان کے 6 بچے پاک فوج کا حصہ رہے ٗ3 نے مادر وطن کیلئے جام شہادت نوش کیا ان کے 2 بھتیجے بھی شہید ہو چکے۔ آئی ایس پی آر کے مطابق آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا کہ پاکستان کو دھمکانے والی بیرونی قوتیں سمجھ لیں ،جس قوم کے پاس ایسے والدین اور بچے ہوں ان کا کوئی بال بیکا بھی نہیں کر سکتا ۔

ان کا کہناتھاکہ وہ ایسی فوج کے چیف ہیں جس کے جوان ہر وقت ملک پر جان قربان کرنے کو تیار رہتے ہیں۔آرمی چیف نے کہا کہ کوئی رقم ان بہادروں کی حب الوطنی اور قربانیوں کی قیمت نہیں چکا سکتی ،ان کی قربانیاں ہی ہمیں پرامن اور مستحکم پاکستان کی طرف لے جارہی ہیں۔ جیو نیوز کے مطابق آئی ایس پی آر کا کہنا ہے کہ محمدعلی نےدورہ کرنےاورگاؤں کیلئے فلاحی پیکیج دینے پر آرمی چیف کا شکریہ ادا کیا۔

پاکستان کی شدت پسندی سے نمٹنے کی کوششیں، افغانستان کی سرحد پر باڑ کی تنصیب

پاکستانی فوج نے شدت پسندی اور غیر قانونی نقل و حرکت کے مسئلے سے نمٹنے کے لیے افغانستان سے متصل اپنی سرحد پر باڑ نصب کرنا شروع کی ہے۔ یہ منظر شمالی وزیرستان کے مقام انگور اڈا کا ہے جہاں افغان سرحد پر باڑ لگائی جا چکی ہے۔

26 مارچ کو پاکستانی فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا تھا کہ پاک افغان سرحد پر باڑ لگانے کا عمل شروع ہوچکا ہے۔ یہ پاکستانی سپاہی سرحدی نگرانی کی ڈیوٹی پر مامور ہے۔ یہ باڑ افغان صوبے پکتیکا کو پاکستانی علاقے جنوبی وزیرستان سے الگ کرتی ہے۔

 جنرل باجوہ نے کہا تھا کہ افغان سرحد پر معمول کی فضائی نگرانی کے علاوہ سرحد پر اضافی تکنیکی نگرانی کے اقدامات بھی کیے جا رہے ہیں۔

سرحد پر باڑ لگانا اربوں روپے کا ایک منصوبہ ہے جس کے تحت سرحد پر نگرانی کے لیے سینکڑوں چھوٹے چھوٹے قلعے تعمیر کیے جائیں گے۔

پاکستان کی ایٹمی صلاحیت، پاکستان کی حفاظت کی ضامن

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے پاکستان کے بارے میں نہایت سخت لہجہ اپنایا، مگر انہوں نے اب تک پابندیاں نہیں عائد کی ہیں، جیسا کہ ایران کے ساتھ ہوا، نہ ہی انہوں نے پاکستان کو شمالی کوریا کی طرح ‘مکمل طور پر تباہ’ کر دینے کی دھمکی دی۔ پاکستانی سفارتکاروں کا ماننا ہے کہ واشنگٹن کے ساتھ گرمجوش تعلقات نہ سہی مگر پھر بھی کام کی حد تک تعلقات کی گنجائش موجود ہے۔ مگر یہ دیکھنا ابھی باقی ہے۔ اسلام آباد افغانستان سے متعلق امریکا کی ‘نئی’ پالیسی سے متفق نہیں ہے۔ یہ افغانستان کی جنگ اپنی زمین پر نہیں لڑے گا۔ یہ افغانستان میں ہندوستان کے وسیع کردار کی مخالفت کرتا رہے گا۔ اسلام آباد افغان طالبان اور کابل کے درمیان طویل تنازعے کے بجائے تنازعے کا سیاسی حل چاہتا ہے.

اگر پاکستان اور امریکا افغانستان پر اپنے حد درجہ مختلف مؤقف کو ہم آہنگ کرنے میں کامیاب ہو بھی جائے، تب بھی ان اسٹریٹجک شراکت داریوں میں تبدیلی ہوتی نظر آتی جو کہ ایشیاء میں پالیسیوں کا تعین کریں گی۔ امریکا نے ایشیاء میں چین کے اثر و رسوخ کے مقابلے کے لیے ہندوستان کو اپنا اسٹریٹجک شراکت دار منتخب کر لیا ہے۔ نتیجتاً پاکستان کی سلامتی کے لیے ہندوستان کی جانب سے کیا خطرات پیدا ہوتے ہیں، اِس سے امریکا کو یا تو کوئی فرق نہیں پڑتا، یا پھر خطے میں ہند امریکی بالادستی کے خلاف پاکستان کی مزاحمت کو کمزور کرنا اِس کی پالیسی کا حصہ ہے۔

امریکی سیکریٹری دفاع کے حالیہ دورہءِ ہندوستان نے اِس اسٹریٹجک اتحاد کی تصدیق کرتے ہوئے افغانستان میں اُن کے تعاون پر مہر ثبت کر دی ہے۔ ہندوستانی ڈکٹیشن کی مزاحمت اور امریکا کی اسٹریٹجک پالیسیوں کی مخالفت کرنے کی قابلیت پاکستان میں ایک اہم وجہ سے موجود ہے۔ وہ اہم وجہ پاکستان کی ایٹمی اور میزائل صلاحیت ہے۔ اس کے بغیر پاکستان پر یا عراق کی طرح حملہ کر دیا جاتا یا پھر ایران کی طرح پابندیاں لگا دی جاتیں۔ دوسری جانب شمالی کوریا اپنی تنہائی کے باجود امریکا کو نیچا دکھانے میں اِس لیے کامیاب ہے کیوں کہ وہ ایک ایٹمی قوت اور میزائل ٹیکنالوجی کی ماہر قوم ہے۔

ایک اسلامی ایٹمی قوت امریکا اور زیادہ تر مغربی ممالک کے لیے ہمیشہ سے گلے کی ہڈی کی طرح تھی۔ یہاں تک کہ جب پاکستان امریکا کا قریبی اتحادی تھا، تب بھی امریکا کی پوری کوشش تھی کہ کسی نہ کسی طرح اِس کے ایٹمی اور میزائل پروگرام کو بتدریج کم کرتے ہوئے ختم ہی کر دیا جائے۔ امریکا کے ہندوستان کے ساتھ اتحاد کے بعد اِن کوششوں میں تیزی آئی ہے۔ پاکستان کے اسٹریٹجک پروگرامز کے خلاف تفریق پر مبنی ٹیکنولوجیکل اور سیاسی پابندیوں کے علاوہ امریکا اب مطالبہ کر رہا ہے کہ پاکستان اکیلے ہی ایٹمی مواد اور تھوڑے اور طویل فاصلے تک مار کرنے والے ایٹمی میزائلوں کی تیاری بند کر دے۔

مگر اِس کے ساتھ ہی یہ ہندوستان کی اِس کے ایٹمی اسلحے میں اضافے اور جدت لانے، اِس کی میزائل اور اینٹی بیلسٹک میزائل صلاحیتوں میں اضافے، اور اِس کی فضائی و بحری افواج اور سیٹلائٹ اور خلائی پروگرام میں ترقی کے لیے بھرپور مدد کر رہا ہے۔ باوثوق رپورٹس جو کسی سے ڈھکی چھپی نہیں، موجود ہیں کہ امریکا نے کسی تنازعے یا بحران کے دوران پاکستان کے ایٹمی اسلحے پر قبضہ کرنے یا اِسے برباد کرنے کا منصوبہ بنا رکھا ہے۔ امریکی تھنک ٹینکس نے پاکستان کے ایٹمی اثاثوں کے دہشتگردوں کے ہاتھ لگ جانے، یا اِس سے بھی زیادہ مضحکہ خیز طور پر پاک فوج کے ‘انتہاپسند’ فوج میں تبدیل ہو جانے کے خیالی پلاؤ بنا رکھے ہیں۔ حقیقت یہ ہے کہ اِس طرح کی خوفناک صورتحال پیدا کی جا سکتی ہے تاکہ ‘قبضہ کرو اور تباہ کرو’ کے منصوبے کو عملی جامہ پہنایا جا سکے۔

اگر پاکستان اور ہندوستان کے درمیان ایک اور جنگ ہو گئی، تو حالات میں مزید خرابی آئے گی۔ کشمیر دونوں ممالک کے بیچ ایک جاری تنازع ہے جو ایٹمی جنگ کو ہوا دے سکتا ہے۔ چوںکہ دونوں ممالک کی فوجی قوت میں عدم توازن موجود ہے، اِس لیے پاک و ہند جنگ کے فوری طور پر ایٹمی جنگ میں تبدیل ہونے کا خطرہ موجود ہے۔ اِس لیے جنگ کا تو سوچا بھی نہیں جانا چاہیے۔ مگر پھر بھی ہندوستان کے سیاسی اور عسکری قائدین پاکستان کے خلاف ‘سرجیکل اسٹرائیکس’ اور ‘محدود’ جنگ کی باتیں کرتے رہتے ہیں۔ اگر ہندوستان نے کبھی پاکستان کے خلاف جنگ چھیڑنے کا فیصلہ بھی کیا تو اُسے پہلے پاکستان کے ایٹمی اثاثوں کو ختم کرنے کے لیے حملہ کرنا ہو گا، یا پھر ہندوستان کے لیے یہ کام امریکا سرانجام دے گا ؟ پاکستان کو دونوں ہی طرح کی صورتحال کے لیے تیار رہنا چاہیے۔

اسلام آباد کو یہ سمجھنا چاہیے کہ ماضی میں اپنے ایٹمی اثاثوں کی ‘سلامتی و تحفظ’ کے لیے امریکا سے ‘تعاون’ کی وجہ سے امریکا کو پاکستان کے ایٹمی اثاثوں کے بارے میں اچھی خاصی انٹیلیجنس حاصل ہے۔ مگر پاکستانی حکام امریکا کی پاکستان کے اثاثوں پر قبضہ کرنے کی صلاحیت کو درست طور پر مسترد کرتے ہیں۔ ہمارے پاس کئی ہتھیار، کئی جگہوں پر پھیلے ہوئے اور اچھی طرح محفوظ ہیں، اِس لیے اِن پر قبضہ، یا اِن پر حملہ کر کے اِنہیں برباد نہیں کیا جا سکتا۔ مگر ایٹمی ہتھیار ڈیلیور کرنے والے سسٹم (میزائل وغیرہ) کو چھپانا یا محفوظ رکھنا مشکل ہوتا ہے۔

کسی بھی تنازعے کی صورت میں ابتدائی حملے کا شکار یہ ڈیلیوری سسٹم ہی بنیادی ہدف ہوں گے۔ کسی بھی تنازعے کی صورت میں جب انہیں الگ رکھے گئے وار ہیڈز سے ملایا جا رہا ہو گا، تو اُن کی جگہوں کا پتہ لگانا آسان ہو جائے گا۔ اِس کے علاوہ، جیسا کہ حال ہی میں کوریا میں دیکھا گیا، میزائل لانچ کو سائبر حملوں اور دیگر تکنیکی ذرائع سے سبوتاژ کیا جا سکتا ہے۔ اِس اسٹریٹجک صورتحال میں پاکستان کے ایٹمی اثاثے ہی بیرونی خطرات اور دباؤ کے خلاف پاکستان کی سب سے بڑی قوت ہیں۔ پاکستان کو اپنی ایٹمی صلاحیت کو قابلِ اعتبار بنائے رکھنے کے لیے کئی اقدامات کرنے چاہیے۔ پہلا، شمالی کوریا کی طرح آرٹلری اور تھوڑے فاصلے تک مار کرنے والے میزائلوں کی ہندوستان کے کولڈ اسٹارٹ حملے کے خلاف مزاحمت کی پہلی صف کے طور پر تنصیب۔ اِس سے ہندوستانی حملہ ناکام ہو جائے گا اور ایٹمی حملے کی نوبت اوپر چلی جائے گی۔

دوسرا، پاکستان کو ایٹمی حملوں کی صلاحیت رکھنے والے طویل، درمیانے اور مختصر فاصلے تک مار کرنے والے میزائلوں کی تعداد بڑھانی ہو گی تاکہ ہندوستان کے کسی بھی بیلسٹک میزائل سسٹم کا توڑ کیا جا سکے۔ تیسرا، پاکستان کو اپنے میزائلوں پر ایٹمی وار ہیڈز کی تنصیب کے لیے لگاتار ایٹمی مواد تیار کرتے رہنا ہو گا۔ چوتھا، جوابی حملے کے لیے کم از کم کچھ میزائل ایٹمی وارہیڈز سے لیس کر کے اُنہیں پوشیدہ رکھ کر تیار رکھنا ضروری ہے۔ اِس کے علاوہ آبدوزوں پر نصب بیلسٹک میزائل پاکستان کو دوسرا حملہ کرنے کی صلاحیت فراہم کر سکتے ہیں۔ پانچواں، مؤثر فضائی دفاعی نظام اور محدود اینٹی بیلسٹک میزائل سسٹمز کی تنصیب ضروری ہے تاکہ کمانڈ اینڈ کنٹرول سینٹرز کو محفوظ بنایا جا سکے۔

چھٹا، سائبر جنگ کے لیے حملے اور دفاع، دونوں کی صلاحیت پیدا کی جانی چاہیے۔ اِس سب کے علاوہ، پاکستان کو جلد سے جلد خبردار کرنے والے سسٹمز، جن میں سیٹلائٹس، طیارے اور ڈرونز شامل ہیں، حاصل کرنے چاہیے۔ اِس دوران پاکستان کو چین کے ایسے سسٹمز سے مدد لینی چاہیے۔ آخر میں یہ کہ چین کی بری، بحری اور فضائی افواج کے ساتھ اسٹریٹجک اور روایتی مزاحمت کی صلاحیت بڑھانی چاہیے تاکہ کم وقت اور کم خرچ میں فوائد حاصل کیے جا سکیں۔
ایک بار پاکستان اپنے ایٹمی اثاثوں کے مکمل طور پر قابلِ اعتبار ہونے کو واضح کر دے گا، تو جنوبی ایشیاء میں قیامِ امن اور مسئلہ کشمیر کے حل کی اس کی کوششوں پر ہندوستان اور امریکا، دونوں ہی کی جانب سے مثبت ردِ عمل کی توقع ہے۔ اِس کے بعد پاکستان اپنے سماجی و اقتصادی مقاصد کو بیرونی جارحیت، مداخلت اور دباؤ کے خوف کے بغیر حاصل کر سکے گا۔

منیر اکرم

لکھاری اقوام متحدہ میں پاکستان کے سفیر رہ چکے ہیں۔

یہ مضمون ڈان اخبار میں 1 اکتوبر 2017 کو شائع ہوا۔
 

Pakistan, Russia Begin ‘Friendship 2017’ Joint Anti-terror Drill

Pakistani and Russian military commandos have launched joint counterterrorism drills in the mountains and forests of Russia’s North Caucasus republic of Karachaevo-Cherkessia. The two-week-long exercise dubbed as “Friendship 2017” involves more than 200 mostly special forces from both countries who will conduct joint “hostage rescue” and “cordon-and-search” operations, according to the Pakistani military. “The joint exercise will enhance and further strengthen military ties between the countries and share Pakistan army’s experience in war against terrorism,” it added. Meanwhile, a nearly three-week-long joint air force exercises China is hosting with Pakistan are due to conclude this week. A spokesman for the Chinese air force described them as “routine” exercises.

Pakistan’s deepening political, economic and defense ties with traditional ally China and its emerging new alliance with Russia come amid Islamabad’s increasingly uneasy and strained relations with the United States. The tensions stem from persistent U.S. allegations that Pakistan is not doing enough to prevent terrorist groups on its soil from undertaking deadly attacks against American troops in Afghanistan or from undermining peace-building efforts in the war-ravaged country. Bilateral ties have plunged to new lows following U.S. President Donald Trump’s policy speech last month that accused Islamabad of not ending terrorist safe havens on its soil. U.S. officials have also threatened, among other punitive measures, to degrade Pakistan’s status of a major non-NATO ally.

Islamabad promptly rejected the charges, saying no sanctuaries exist on Pakistani soil because of sustained security operations. It asserted Washington was “scapegoating” Pakistan because of its own “failures” in ending the Afghan war. Pakistan hosted the inaugural round of the counterterrorism drills with Russia late last year, their first-ever joint military exercise. The drills stem from a defense cooperation agreement the two countries signed in 2014, lifting a long-running Russian embargo on arms sales to Pakistan. The deal paved the way for the sale of Mi-35 combat helicopters to Islamabad, despite objections by India, Moscow’s longtime ally and Pakistan’s archenemy.
The October 4 conclusion of the drills is expected to coincide with an official visit to Russia by Pakistan army chief, General Qamar Javed Bajwa. Foreign Ministry spokesman Nafees Zakaria said the visit is a regular high-level exchange between the two sides that “has set the stage for translating political goodwill into a substantial partnership, in particular, in the field of defense.”

پاکستان اور روس کی مشترکا کمانڈوز مشقیں شروع ہو گئیں

پاکستان اور روس کے درمیان دو ہفتوں پر محیط مشترکہ فوجی مشقوں کا آغاز روس میں ہو گیا ہے۔ ’’دروزبہ‘‘ نامی یہ مشقیں روس کے شہر منرالینی میں ہو رہی ہیں۔ پاکستانی فوج کے شعبہ تعلقات عامہ ‘آئی ایس پی آر’ کے مطابق ان مشترکہ فوجی مشقوں کی افتتاحی تقریب میں دونوں ملکوں کی اسپیشل فورسز کے سینیئر افسران شریک ہوئے۔ انسدادِ دہشت گردی کے آپریشن، یرغمال بنائے گئے افراد کی بازیابی اور سرچ آپریشن سے متعلق کارروائیاں ان فوجی مشقوں کا محور ہیں۔ آئی ایس پی آر کے بیان کے مطابق مشترکہ فوجی مشقوں سے دونوں ملکوں کے درمیان عسکری روابط مزید مضبوط ہوں گے اور پاکستان دہشت گردی کے خلاف کارروائیوں سے متعلق اپنے تجربے کا تبادلہ روسی فورسز سے کرے گا۔

گزشتہ سال ستمبر میں پاکستان اور روس کے درمیان پہلی مشترکہ فوجی مشقیں پاکستان میں ہوئی تھیں، جسے دونوں ممالک کے درمیان بہتر ہوتے عسکری تعلقات کے لیے اہم قرار دیا گیا تھا۔ دونوں ملکوں کے تعلقات میں 2014ء کے بعد سے نمایاں بہتری آئی ہے۔ اسی سال روس نے پاکستان کو ہتھیاروں کی فراہمی پر عائد پابندی اٹھا لی تھی جس کے بعد ماسکو نے اسلام آباد کو لڑاکا ہیلی کاپٹروں کی فراہمی کے معاہدے پر دستخط بھی کیے تھے۔ پاکستان کی وزارت خارجہ کے ترجمان نفیس ذکریا نے گزشتہ ہفتے ہی نیوز بریفنگ میں بتایا تھا کہ پاکستانی فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ کا اکتوبر کے پہلے ہفتے میں روس کا دورہ طے ہے۔ اس دورے میں بھی دفاع کے شعبے میں باہمی تعاون بڑھانے پر بات چیت کی جائے گی۔
 

سنہ 1965 کی جنگ میں ’جب پاکستانی بمباری سے ڈر کر انڈین کمانڈر کھیتوں میں چھپ گئے‘.

سنہ 1965 کی جنگ کے دوران لاہور محاذ پر انڈین فوجیوں کو ابتدائی کامیابی تو مل گئی تھی لیکن زمین پر حالات بہت اچھے نہیں تھے۔ میجر جنرل نرنجن پرساد کی 15 ڈویژن میں زبردست افراتفری پھیلی ہوئی تھی۔ مغربی کمان کے سربراہ جنرل ہربكش سنگھ کو جب وائرلیس پر جنرل نرنجن پرساد کا پیغام ملا کہ ان کی ڈویژن پر پاکستان کی دو ڈوژنوں نے حملہ کیا ہے اور ان کی بریگیڈ کو اچّھوگل نہر سے سات کلومیٹر واپس گوسلگيال تک ہٹنا پڑا ہے، تو وہ حیران رہ گئے۔
انھوں نے جنرل نرنجن پرساد کو پیغام بھیجا کہ چاہے جو ہو جائے آپ اپنی پوزیشن سے ایک انچ بھی پیچھے نہیں ہٹیں گے۔ میں اور کور کمانڈر آپ سے ملنے آپ کے ٹھکانے پر ہی آ رہے ہیں۔

جنرل ہربكش سنگھ نے ڈرائیور کو جیپ کے پیچھے بیٹھنے کو کہا اور خود ڈرائیو کرنے لگے۔ جب وہ جی ٹی روڈ پر پہنچے تو وہاں کا نظارہ دیکھ کر ان کے ہوش اڑ گئے۔ ہر جگہ انڈین گاڑیاں جل رہی تھیں۔ سڑک پر پاکستانی جہازوں کی بمباری سے بڑے بڑے گڑھے بن گئے تھے اور پاکستانی طیارے بھی اوپر اڑ رہے تھے۔
جنرل ہربكش سنگھ اپنی سوانح عمری ان دی لائن آف ڈیوٹی میں لکھتے ہیں، ’ہم دیکھ رہے تھے کہ 15 ڈویژن کی گاڑیاں سڑک پر ادھر ادھر پڑی ہوئی تھیں۔ ان کے ڈرائیور انہیں چھوڑ کر بھاگ چکے تھے۔ بہت ٹرینوں کے تو انجن تک بند نہیں کیے گئے تھے۔ سڑک کے بیچو بیچ ایک ہتھیار بند گاڑی کھڑی ہوئی تھی۔ اس میں کوئی نہیں تھا لیکن چابی لگی ہوئی تھی۔ میں نے اسے سڑک سے ہٹوا کر کنارے لگوایا۔‘

ہربكش سنگھ کو ڈویژنل ملٹری پولیس کی ایک گاڑی گنے کے ان کھیتوں کے پاس لے گیا جہاں 15 ڈویژن کے کور کمانڈر میجر جنرل نرنجن پرساد پاکستانی بمباری سے بچنے کے لیے رو پوش تھے۔ ہربكش سنگھ لکھتے ہیں، ’جب جنرل نرنجن پرساد مجھے ریسیو کرنے آئے تو ان کے جوتے کیچڑ سے بھرے ہوئے تھے۔ ان کے سر پر ٹوپی نہیں تھی اور انھوں نے داڑھی بھی نہیں بنائی ہوئی تھی۔ ان کی وردی پر ان کا عہدہ بتانے والے سارے نشانات غائب تھے۔ میں نے ان کو اس حال میں دیکھ کر براہ راست سوال کیا آپ ڈویژن کے جنرل افسر کمانڈنگ ہیں یا قلی؟ آپ نے داڑھی کیوں نہیں بنائی ہے اور آپ کی رینک کے بیج کہاں ہیں؟‘

ابھی یہ سوال جواب چل ہی رہے تھے کہ دو پاکستانی جنگی طیارے بہت نیچے پرواز بھرتے ہوئے ان کے سر کے اوپر سے گزرے۔ جنرل نرنجن پرساد نے جنرل ہربكش سنگھ کو پاس کی جھاڑی میں کھینچنے کی کوشش کی۔ ہربكش سنگھ نرنجن پرساد پر زور سے چلائے اور بولے ’دشمن کے جہازوں کی ہم میں کوئی دلچسپی نہیں ہے۔ ویسے بھی وہ ہمیں نہیں دیکھ پا رہے ہیں۔ وہ ان گاڑیوں کو نشانہ بنا رہے ہیں جنہیں آپ نے سڑک پر یوں ہی چھوڑ دیا ہے۔‘ جنرل ہربكش نے نرنجن پرساد سے پوچھا، ’آپ کے بریگیڈ کمانڈر کہاں ہیں؟‘

ہربكش نے ان سے پوچھا، ’آپ لوگ کہاں ہیں؟‘ نرنجن پرساد نے آواز لگائی ’پاٹھک، پاٹھک۔‘ جب پاٹھک وہاں پہنچے تو ان کا چیہرہ سفید تھا۔ پاٹھک نے کہا ‘وہ لوگ واپس آ رہے ہیں لیکن بہت لوگوں کے ہلاک ہو جانے کی وجہ سے وہ غیر فعال ہو گئے ہیں۔‘ ہربكش نے پوچھا، ’کتنے لوگ ہلاک ہوئے ہیں؟ پاٹھک نے جواب دیا 30 افراد زخمی ہوئے ہیں۔ جنرل ہربكش سنگھ نے کہا، ’4000 میں سے صرف 30 افراد زخمی ہیں اور آپ کہہ رہے ہے مکمل بریگیڈ غیر فعال ہو گئی ہے؟‘ جنرل ہربكش سنگھ نے انہیں نئے سرے سے آگے بڑھنے کا حکم دیا۔ انھوں نے جنرل نرنجن پرساد سے کہا کہ وہ بریگیڈ کی پیش رفت پر نظر رکھیں اور اگلی صبح کور کمانڈر کو آپریشن کی اطلاع دیں۔

1965 کی جنگ
سات ستمبر کو نرنجن پرساد اپنی بریگیڈ کی پوزیشن جاننے کے لیے اے ڈی سی کے ساتھ ایک جیپ پر سوار ہو کر آگے بڑھے۔ ابھی وہ کچھ ہی دور گئے ہوں گے کہ ان پر پاکستانیوں نے میڈیم مشین گن سے فائر کیا۔ نرنجن پرساد اور ان کے ڈی سی گاڑی چھوڑ کر قریب کے کھیتوں میں چھپ گئے۔ تھوڑی دیر بعد انھوں نے واپس لوٹنے کا فیصلہ کیا اور اس کے لیے انھوں نے پیچھے آنے والی جیپ کا استعمال کیا۔ ان جیپوں میں سوار لوگوں سے پیدل واپس آنے کے لیے کہا گیا۔ انھوں نے اپنی جیپ وہیں کھیتوں میں چھوڑ دی جس میں ان کا ایک بریف کیس رکھا ہوا تھا۔ اس میں کئی اہم کاغذات بھی تھے۔ جیپ پر ڈویژن کا جھنڈا اور سٹار پلیٹ بھی لگی ہوئی تھی۔

بعد میں یہ جیپ پاکستانی فوجیوں کے ہاتھ لگ گئی اور ریڈیو پاکستان نے بریف کیس میں رکھے کاغذات نشر کرنا شروع کر دیے۔ ان کاغذات میں جنرل ہربكش سنگھ کے خلاف فوجی سربراہ سے کی گئی شکایت بھی تھی۔ 11 ویں کور کے کمانڈر، نرنجن پرساد کی اس غلطی کے لیے ان کا کورٹ مارشل کرنا چاہتے تھے لیکن جنرل چوہدری نے نرنجن پرساد سے استعفیٰ دینے کے لیے کہا۔ ان کی جگہ میجر جنرل موہندر سنگھ کو 15 ڈویژن کا نیا کمانڈر بنایا گیا۔ بعد میں جنرل نرنجن پرساد نے جنرل جوگندر سنگھ کو دیے انٹرویو میں اس بات کی تردید کی کہ انھوں نے جیپ میں کوئی اہم کاغذ چھوڑے تھے۔

انھوں نے انٹرویو میں کہا، ’میں جیپ میں صرف ایک پیڈ چھوڑ کر آیا تھا۔ بعد میں میرے افسروں نے مجھے اس معاملے پر بلیک میل کرنے کی کوشش کی اور میرے خلاف انکوائری اس شخص کو سونپی گئی جس کی خفیہ رپورٹ میں میں نے اس کے خلاف لکھا تھا۔‘ جوگندر سنگھ اپنی کتاب ’بیہائنڈ دا سین’ میں جنرل نرنجن پرساد کا دفاع کرتے ہوئے لکھتے ہیں کہ نرنجن کو اس لیے نہیں برطرف کر دیا گیا کہ وہ ایک بزدل کمانڈر تھے بلکہ اس لیے کہ وہ ایک ’ڈیفیكلٹ سب آرڈینیٹ‘ تھے۔ جوگندر سنگھ اور ہربكش سنگھ ایک دوسرے کو پسند نہیں کرتے تھے لیکن کچھ غیر جانبدار مبصرین جیسے میجر کیسی پرول اور میجر آغا ہمايوں امین کا خیال ہے کہ نرنجن پرساد کی ڈویژن نے بہتر مواقع کو ہاتھ سے نکل جانے دیا اور ان کی وجہ سے انڈیا کی کافی سبکی ہوئی۔

ریحان فضل
بی بی سی ہندی، دہلی
 

Nation solemnly remembers the heroes and martyrs of 1965 war

Defence Day of Pakistan marking the 52nd anniversary of the 1965 war is being celebrated with traditional fervour and solemnity across the country. The day began with special prayers for the progress and prosperity of Pakistan, followed by the change of guards ceremonies at the mausoleums of Allama Iqbal in Lahore and Quaid-i-Azam in Karachi, and a ceremony at the Pakistan Navy headquarters in Islamabad. A smartly attired contingent of Pakistan Air Force (PAF) cadets assumed the responsibility of security during an impressive ceremony with Air Vice Marshal (AVM) Imran Khalid as the chief guest on the occasion.
Meanwhile, all the formations and units of the Lahore Garrison also observed Defence Day with solemnity and remembrance and paid tributes to the martyrs of 1965 war. Corps Commander Lahore General Sadiq Ali visited Ravi Siphon near Batapur and laid floral wreath on the monument of 1965 War’s martyrs. The highlight of the day will be a function tonight at General Headquarters in Rawalpindi to pay tribute to the martyrs.

خانہ کعبہ کے اندر

اگر نیت صاف، دل ودماغ ’’مَیں‘‘ سے پاک اور کوئی ذاتی مفاد نہ ہو تو پھر ناممکن بھی ممکن ہو جائے۔ جب ایک نسبتاً گرم دن کے بعد آئی شام، رات میں ڈھل کرخنکی کی چادر اُوڑھ چکی، جب چائے، کافی اور قہوے کے دور چل چکے، جب وہ اماراتی ولی عہد شیخ محمد بن زید النہیان سے ا پنی اُس ملاقات کا بتا چکے کہ جو تھی تو آدھے گھنٹے کی اور جو شروع ہوئی انتہائی Tenseماحول میں مگر جاری رہی ڈھائی گھنٹے تک اور جس کا اختتام ہوا پرجوش معانقوں اورمحبت بھرے اندا زمیں، جب وہ دبئی کے حکمران شیخ محمد سے ہوئی اپنی ایک بہت ہی سود مند ملاقات کا حال سنا چکے، جب چینی قیادت سے ہوئی انکی ملاقاتوں پر گفتگو ہو چکی، جب قطر کے امیر کے گھر ایک کھلے ڈھلے ماحول میں ہوئی ایک لمبی نشست پر بات ہو چکی، جب انکا برطانوی دورہ بھی ڈسکس ہو چکا اور جب کلبھوشن سے احسان اللہ احسان تک ہر موضوع زیرِبحث آچکا.
تب مجھ سے رہا نہ گیا اور میں نے سپہ سالار جنرل قمر جاوید باجوہ سے وہ سوال پوچھ ہی لیا جو میں ہر بار پوچھنا بھول جاتا تھا ’’بحیثیت آرمی چیف سعودی عرب کے پہلے ہی دورے میں آپ کو خانہ کعبہ کے اندر جانے کی سعادت ہوئی، یہ کیسے ہو گیا ‘‘ میرے اس سوال پر اک عجیب سے اطمینان بھرے انداز میں صوفے سے ٹیک لگا کر چند لمحوں کی خاموشی کے بعد وہ بولے ’ ’ سچی بات تو یہ کہ جس کا گھر، اسی کا کرم اور اسی کا بلاوا، ورنہ یہ پہلے سے طے نہیں تھا، دراصل ہوا یوں کہ ریاض میں سعودی فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز اور نائب ولی عہد محمد بن سلمان سے ملاقاتوں کے بعد جب مدینہ آکر میں روضہ رسول ؐ پر سلام اور مسجد نبوی ﷺمیں نفل پڑھ کر فارغ ہوا تو سعودی باد شاہ کے پروٹوکول سربراہ جو پہلے میرےا سٹاف کو آگاہ کر چکا تھا، اس نے پھر ٹیلی فون پر مجھے بھی بتایا کہ’’ شاہ سلمان بن عبدالعزیز کی خواہش پر عمرے کے بعد آپ کیلئے خصوصی طو ر پر کعبہ کا دروازہ کھولا جائے گا‘‘، یہ سنتے ہی میں نے اللہ کا شکر ادا کیا اور شکر ادا کرتے ہوئے میری آنکھیں بھیگ گئیں۔ خیر مدینہ منورہ سے مکہ مکرمہ پہنچ کر عمرہ کرنے، شاہی مہمان خانے میں آکر احرام اتارنے، تھوڑی دیر آرام کرنے اور پھر عشاء کی نماز پڑھنے کے بعد سعودی شاہی فورس کا خصوصی دستہ ہمیں خانہ کعبہ کے دروازے تک لایا، جہاں سے میں اپنے وفد سمیت اللہ کے گھر کے اندر گیا ‘‘۔
سر باجوہ جونہی بات کرتے کرتے رُکے تو میں نے اگلا سوال کر دیا ’’کعبتہ اللہ میں جانے کیلئے جب آپ سیڑھیاں چڑھ رہے تھے، تب کیا احساسات تھے ‘‘، وہ قہو ے کا کپ اُٹھاتے ہوئے بولے ’’ بس بار بار اپنے گناہ گار ہونے اور اللہ کے گھر کے تقدس اور جاہ وجلال کا احساس ہو رہا تھا ‘‘ سر باجوہ نے رُ ک کر جیسے ہی قہوے کا گھونٹ بھرا تو میں نے ایک اور سوال کیا ’’خانہ کعبہ میں داخل ہو نے کے بعد کیا Feelings تھیں ‘‘لمحہ بھر کے توقف کے بعد وہ بولے ’’وہ Feelings لفظوں میں بیان نہیں کی جا سکتیں، وہاں پہنچ کر بھلا کسے ہوش رہتا ہے، یوں لگتا ہے کہ جیسے بندہ کسی اور ہی دنیا اور کسی اور ہی جہان میں پہنچ گیا ہو، وہاں جونہی یہ خیال آتا ہے کہ میں کہاں ہوں تو دماغ کام کرنا چھوڑ دیتا ہے ‘‘.
اُنہوں نے بات مکمل کی تومیرا اگلا سوال تیار تھا ’’اللہ کے گھر میں داخل ہوتے وقت یا داخل ہو کر پہلی نظر پڑتے ہی کیا دیکھا اور اندر جا کر پہلا کام کیا کیِا ‘‘، اندر داخل ہوتے ہی میں نے دیکھا کہ کعبۃ اللہ کے ستونوں کے درمیان رسی پر بہت سارے برتن لٹکے ہوئے ہیں، یہ غالباً حضور ؐ کے دور یا اس سے بھی پہلے کے ہیں، باقی اندر جا کرمیں جیسے ہی نفل پڑھنے کیلئے ایک جگہ کھڑا ہوا تو سعودی شاہی گائیڈ مجھے ’’رکن یمنی ‘‘والی دیوار کے ساتھ ایک جگہ لے جا کر بولا ’’آپ یہاں نفل پڑھیں کیونکہ یہ مصلّیٰ رسولؐ ہے، حضورؐ یہاں نفل پڑھا کرتے تھے‘‘، میں نے پہلے وہاں نفل پڑھے پھر کعبۃ اللہ میں گھوم کر چاروں طرف نفل پڑھے اور پھر جب میں دعا مانگنے میں مصروف تھا تو اللہ کا مجھ پر ایک اور کرم ہوا کہ میرے لیئے کعبۃ اللہ کے اندر موجود ’’ توبہ کا دروازہ‘‘ بھی کھول دیا گیا اور میں نے باقی دعائیں وہاں جا کر کیں.
بات ختم کر کے غیر محسوس طریقے سے ٹشو سے اپنی آنکھوں کی نمی صاف کرتے سر باجوہ سے جب میں نے یہ پوچھا کہ ’’کوئی ایسی دعا جو آپ نے وہاں بار بار مانگی ہو‘‘توان کا جواب تھا ’’ویسے تو میں نے پاک فوج، اپنے شہداء، والدین، بچوں، رشتہ داروں اور دوست احباب کیلئے بھی بہت دعائیں کیں مگر خانہ کعبہ کے اندر میرے دل ودماغ پر پاکستان چھایا ہوا تھا، وہاں میں نے سب سے زیادہ دعائیں پاکستان کیلئے کیں اور مجھے اچھی طرح یاد کہ دعا مانگتے مانگتے جب میں یہاں پہنچا کہ ’’اے پاک پروردگار پُر امن اور مستحکم پاکستان کیلئے پاک فوج کی دی گئی قربانیاں رائیگاں نہ جانے دینا ‘‘تو میری جو کیفیت ہوئی وہ بیان سے باہر ہے، یہاں میں یہ بھی ضرور بتانا چاہوں گا کہ ان لمحوں میں جب اندر میں اپنے ملک کیلئے دعائیں کر رہا تھا تو باہر کعبہ کا صحن نعرہ تکبیر، اللہ اکبر، پاکستان زندہ باد اور پاک فوج پائندہ باد کے نعروں سے گونج رہا تھا، میں عمر بھر یہ روح پرور لمحے نہیں بھلا سکتا، اِدھر سرباجوہ خاموش ہوئے اور اُدھر غیر ارادی طورپر جب میری نظر ان کے چہرے پر پڑی تو انکی آنکھیں پھر سے بھیگ چکی تھیں۔
صاحبو ! اُس رات نجانے کتنے موضوعات پر بات کر کے واپس آتے ہوئے بار بار میرے ذہن میں یہ خیال آرہا تھا کہ یہ نصیب نصیب کی بات کہ جو سعادت پچھلے دونوں چیفس کے حصے میں نہ آئی، وہ سعادت آتے ہی سرباجوہ کو حاصل ہو گئی، میں یہ بھی سوچ رہا تھا کہ بھلا کل تک کس کے وہم وگمان میں تھا کہ وہ کام جو پچھلے چیفس 9 سالوں میں نہ کر سکے، وہ جنرل قمر جاوید باجوہ صرف 5 مہینوں میں کر لیں گے، کیا کوئی سوچ سکتا تھا کہ صرف 150 دنوں میں اگر ایک طرف پنجاب میں رینجرز آپریشن شروع ہو جائے گا تو دوسری طرف 9 سالوں سے التوا میں پڑی مردم شماری کا آغاز ہو جائے گا، اگر ایک طرف کلبھوشن کو پھانسی کی سزا سنا دی جائے گی تو دوسری طرف عزیر بلوچ کا کیس فوجی عدالت میں آجائے گا اوراگر ایک طرف اندرونی محاذ پر آپریشن ردالفساد لانچ ہو جائے گا تو دوسری طرف بیرونی محاذ پر افغان بارڈ مینجمنٹ پر عملی اقدامات سے لیکر دہشت گردوں کیخلاف افغانستان کے اندر 100 کلومیٹر تک کارروائی اور ہر محاذ پر بھارتی جارحیت کو منہ توڑ جواب بھی ملے گا.
اور پھر یہ کیا آسان کام ہے کہ صرف 5 مہینوں میں آرمی چیف کا نہ صرف اگلے مورچوں اور محاذوں پر لڑتے جوانوں سے دو تین بار ملنے پہنچ جانا، نہ صرف 150 دنوں میں ان کا پاکستان کا مقدمہ لے کر سعودی عرب، یو اے ای، چین، قطر اور برطانیہ سے بھی ہو آنا اور نہ صرف فاٹا میں جاری ترقیاتی کاموں سے لیکر سی پیک اور گوادر کی نگرانی کرنا بلکہ ریکوڈک کے معاملے سے لیکر پاک کی فوج کی جدید خطوط پر تربیت تک سب کچھ کر جانا، یہی نہیں، آگے بھی سنتے جایئے، گو کہ چھٹی والے دن بھی رات 3 تین بجے تک کام کرتے اور پاکستان میں جمہوریت کو پھلتا پھولتا دیکھنے کے خواہش مند جنرل باجوہ ان موضوعات پر نہیں بولتے مگر اب یہ سب کو معلوم ہو چکا کہ جنرل راحیل شریف کو زمین کے مسئلے سے نکالنے اور ان کے مسلم افواج کے کمانڈر بننے کے ڈی ٹریک ہو چکے معاملے کو پھر سے ٹریک پر لانے کا کریڈٹ بھی سر باجوہ کو ہی جائے اور پھر ہر قسم کی ٹوئٹ بازی اور کریڈٹ بازی کے چکروں سے دور بڑی خاموشی سے مختلف محاذوں پر بیک وقت ہوش اور جوش سے کام کرتے جنرل قمر باجوہ کی ملک سے محبت کا اندازہ لگائیے کہ جب امیرِ قطر انہیں کہتے ہیں کہ ’’برادر بتایئے میں آپ کیلئے کیا کر سکتا ہوں ‘‘ تو ایک لمحہ ضائع کئے بغیر وہ امیرِ قطر سے کہہ دیتے ہیں کہ ’’جتنا زیادہ ہو سکے میرے ملک کے بے روزگاروں کو قطر میں روزگار دیں ‘‘ اور جو گارڈ آف آنر کے بعد سڑک کے کنارے چلتے ہوئے برطانوی فوج کے چیف کو مخاطب کرتے ہوئے کہہ دیں کہ ’’وہ دن دور نہیں جب پاکستان کے حالات بھی ایسے ہو ں گے کہ میں بھی آپکو اسی طرح وہاں سیکورٹی کے بنا آزادانہ گُھما پھرا سکوں گا‘‘۔ صاحبو! میں تو جب بھی گھکھڑ منڈی سے کعبہ شریف میں توبہ کے دروازے تک حیرت انگیز کامیابیوں بھرا یہ سفر دیکھتا ہوں تو اللہ کے فضل کے بعد مجھے جو بات سمجھ آتی ہے وہ یہی کہ اگر نیت صاف، دل ودماغ ’’مَیں‘‘ سے پاک اور ذاتی ایجنڈا نہ ہوتو پھر ناممکن بھی ممکن ہو جائے۔
ارشاد بھٹی