پاکستان اور ترک بحری افواج کی پہلی دو طرفہ مشقیں

پاکستان اور ترک بحری افواج کے درمیان شمالی بحیرئہ عرب میں منعقد ہونے والی پہلی دو طرفہ بحری مشق ’ترگت ریز‘ یعنی شمشیر اسلام ختم ہو گئی ۔ ترک بحریہ کے فریگیٹ ٹی سی جی گیلیبولو ، پاکستان نیوی بحری جہازوں ’سیف‘، ’اصلت‘ ،’ نصر‘،’ قوت‘ ،’عظمت ‘اور ’زرار‘ کے علاوہ پاکستان نیول ایوی ایشن کے فکسڈ اور روٹری ونگ ایئر کرافٹ نے مشق میں حصہ لیا۔ پاک فضائیہ کے لڑاکا طیارے بھی اس مشق میں شریک تھے۔

Advertisements

پاک نیوی نے میرین کروز مزائیل سے بھارت کو پانی کے نیچے سے ڈبونے کی صلاحیت حاصل کر لی

پاکستان میں پاک فوج کے ترجمان ادارے، آئی ایس پی آر کے مطابق پاکستان نے سب میرین لانچ کروز میزائل بابر کے ذریعے ’’ہدف کو درست نشانہ بنانے کا ایک اور کامیاب تجربہ کیا ہے‘‘۔ ترجمان پاک فوج کا کہنا ہے کہ ’’ملکی سطح پر بہتر بنایا گیا کروز میزائل بابر قابل بھروسہ اور سیکنڈ اسٹرائیک کی صلاحیت کا حامل میزائل ہے جو 450 کلومیٹر کے فاصلے تک اپنے ہدف کو تباہ کر سکتا ہے‘‘۔ بتایا گیا ہے کہ ’’زیرآب آبدوز سے فائر کیے گئے اس کروز میزائل نے تمام مقررہ پیرامیٹرز کے مطابق، کامیابی سے اپنے ہدف کو نشانہ بنایا‘‘۔

آئی ایس پی آر کی جانب سے اس تجربہ کی فوٹیج بھی جاری کی گئی ہے جس میں زیرآب میزائل حرکت کرتا ہوا نظر آتا ہے جس کے بعد یہ میزائل پانی سے نکل کر پرواز کرتا ہوا خشکی پر اپنے ٹارگٹ کو نشانہ بناتا ہے۔ بتایا گیا ہے کہ ’’یہ میزائل مختلف اقسام کے روایتی اور غیر روایتی ہتھیار لے جانے کی صلاحیت رکھتا ہے‘‘۔ میزائل فائر کرنے کے موقع پر ڈائریکٹر جنرل اسٹریٹجک پلانز ڈویژن، چیئرمین نیسکام، کمانڈر نیول اسٹریٹجک فورس کمانڈ، اعلیٰ حکام، سائنس دان اور انجینئرز موجود تھے۔

پاک بحریہ اور پاک فضائیہ کا لانگ رینج اینٹی شپ کروز میزائلوں کی فائرنگ کا کامیاب مظاہرہ

شمالی بحیرہ عرب میں پاک بحریہ اور پاک فضائیہ نے لانگ رینج اینٹی شپ کروز میزائلوں کی فائرنگ کا کامیاب مظاہرہ کیا ہے۔ ترجمان پاک بحریہ کے مطابق میزائل فائرنگ کا یہ مظاہرہ بحری مشق رباط کے اختتام پر کیا گیا ۔ میزائل JF 17تھنڈر ایئر کرافٹ اور پاک بحریہ کے F-22P فریگیٹ پی این ایس سیف سے فائر کیے گئے۔ پی این ایس سیف نے سطح سمندر سے سطح سمندر پر مار کرنے والا مزائل C-802 فائر کیا جب کہ JF-17 تھنڈر نے ہوا سے سطح سمندر پر مار کرنے والا مزائل C-802AK فائر کیا۔ دونو ں پلیٹ فارمز سے فائر کیے گئے میزائلوں نے اپنے اپنے اہداف کو کامیابی سے نشانہ بنایا۔

ترجمان کا کہنا ہے کہ سربراہ پاک بحریہ ایڈمرل ظفر محمود عباسی اور سربراہ پاک فضائیہ ایئر چیف مارشل سہیل امان نے پی این ایس نصر سے میزائلوں کی فائرنگ کا مظاہرہ دیکھا۔ اس موقع پر نیول چیف ایڈمرل ظفر محمود عباسی کا کہنا تھا کہ بحیرہ عرب میں مزائل فائرنگ کا یہ تجربہ پاک بحریہ اور پاک فضائیہ کے مشترکہ آپریشنز کی صلاحیت کا منہ بولتا ثبوت ہے، پاک بحریہ اور پاک فضائیہ ملکی سرحدوں کے تحفظ کی مکمل صلاحیت رکھتی ہیں۔ بعد ازاں پاک بحریہ اور پاک فضائیہ کی جانب سے مشترکہ فلائی پاسٹ کا شاندار مظاہرہ بھی پیش کیا گیا ۔ امیرالبحر نے اس موقع پر پاکستان نیول فلیٹ کی آپریشنل تیاریوں پر مکمل اطمینان کا اظہار کیا۔

پاک بحریہ کے سربراہ کیلئے سعودی فوج کا اعلیٰ ترین اعزاز

پاک بحریہ کے سربراہ ایڈمرل ظفر محمود عباسی کو سعودی عرب کے اعلیٰ ترین فوجی اعزاز ’کنگ عبدالعزیز میڈل آف ایکسیلینس‘ سے نواز دیا گیا۔ پاک بحریہ کے شعبہ تعلقات عامہ کی جانب سے جاری بیان کے مطابق ایڈمرل ظفر محمود عباسی رائل سعودی نیول فورسز کے سربراہ کی دعوت پر سعودی عرب کے سرکاری دورے پر ہیں۔ دورے کے دوران پاک بحریہ کے سربراہ کو چیف آف جنرل اسٹاف رائل سعودی آرمڈ فورسز نے ریاض میں منعقد کی گئی پروقار تقریب میں ’کنگ عبدالعزیز میڈل آف ایکسیلینس‘ تفویض کیا۔

ایڈمرل ظفر محمود عباسی نے رائل سعودی آرمڈ فورسز کے چیف آف اسٹاف جنرل فیاد الرُویلی سے ملاقات کی، جس میں باہمی دلچسپی کے پیشہ ورانہ اُمور اور دونوں ممالک کے درمیان دو طرفہ دفاعی تعاون پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ جنرل فیاد الرویلی نے پاکستان اور سعودی عرب کے درمیان تاریخی اور مضبوط دفاعی بنیادوں پر قائم دوستانہ تعلقات کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے خطے میں امن و استحکام کے قیام کے لیے پاکستان کے کردار اور کارکردگی کو سراہا۔

بعد ازاں ایڈمرل ظفر محمود عباسی ریاض میں واقع رائل سعودی نیول فورسز ہیڈ کوارٹرز پہنچے، جہاں رائل سعودی نیول فورسز کے سربراہ نے آمد پر پاک بحریہ کے سربراہ کا استقبال کیا اور سعودی بحریہ کے چاق و چوبند دستے نے نیول چیف کو سلامی پیش کی۔ سربراہ پاک بحریہ نے کمانڈر رائل سعودی نیول فورسز وائس ایڈمرل فہد عبداللہ الغوفیلی سے ملاقات کی، جس دوران نیول چیف نے باہمی دلچسپی کے اُمور بشمول دو طرفہ بحری تعاون اور بحرِ ہند کی سیکیورٹی کی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا۔

رائل سعودی نیول فورسز کے سربراہ نے پاک بحریہ کے افسران و سیلرز کے اعلیٰ پیشہ ورانہ معیار اور خطے کے استحکام اور میری ٹائم سیکیورٹی کے قیام میں پاک بحریہ کے سرگرم اور بھرپور کردار کو سراہا۔ دونوں بحری افواج کے سربراہان نے دونوں ممالک کے درمیان تربیت، خیر سگالی دوروں اور دفاعی تعاون کے مختلف شعبہ جات میں مزید مضبوطی کے لیے قوی اُمید کا اظہار کیا۔

پاک بحریہ کا دیسی ساختہ کروز میزائل ’حربہ‘ کا کامیاب تجربہ

پاک بحریہ میں حال ہی میں شامل کی جانے والی فاسٹ اٹیک کرافٹ (میزائل ) پی این ایس ہمت نے شمالی بحیرئہ عرب میں لائیو ویپن فائرنگ کا شاندار مظاہرہ کیا۔ پی این ایس ہمت نے اندرون ملک تیار کردہ حربہ نیول کروز میزائل فائر کیا ʼ جو سطح آب سے سطح آب پر مار کرنے والا اینٹی شپ اور زمینی حملے کی صلاحیت کا حامل میزائل ہے۔ میزائل نے اپنے ہدف کو پوری کامیابی سے نشانہ بنایا جو اس ویپن سسٹم کی حربی صلاحیت کا واضح ثبوت ہے۔ لائیو ویپن فائرنگ کا یہ کامیاب مظاہرہ نہ صرف پاک بحریہ کی فائر پاور کی قابل اعتماد اور بھرپور صلاحیت کا مظہر ہے بلکہ پاکستا ن کی دفاعی صنعت کی اندرون ملک ہائی ٹیک ہتھیار سازی کی معیاری صلاحیت کا عکاس ہے اوراس شعبے میں خود انحصاری کے حصول کے لیے حکومتی عزم کی واضح دلیل ہے۔

پاک بحریہ کا جہاز شکن میزائل کا کامیاب تجربہ

پاکستانی بحریہ نے سنیچر کو شمالی بحیرہِ عرب میں بحری جہاز شکن فضا سے سمندر میں مار کرنے والے میزائل کا کامیاب مظاہرہ کیا ہے۔ ریڈیو پاکستان کے مطابق پاکستانی بحریہ کے ترجمان نے بتایا کہ سی کنگ ہیلی کاپٹر نے کھلے سمندر میں یہ مظاہرہ کیا اور کامیابی سے ہدف کو نشانہ بنایا۔ اس موقعے پر پاکستانی بحریہ کے سربراہ محمد زکا اللہ نے مظاہرے کا جائزہ لیا۔ ان کا کہنا تھا سی کنگ ہیلی کاپٹر سے میزائل کا کامیاب مظاہرہ پاکستانی بحریہ کی پیشہ وارانہ صلاحیتوں اور جنگی تیاری کا واضح ثبوت ہے۔

انھوں نے کہا کہ پاکستانی بحریہ اپنے وطن کی سالمیت اور مفادات کا ہر قیمت ہر دفاع کرے گی۔ یاد رہے کہ اس سال کے آغاز میں پاکستانی بحریہ نے آبدوز سے کروز میزائل ‘بابر تھری’ کا کامیاب تجربہ کیا تھا۔ بابر تھری کروز میزائل کا تجربہ بحیرہ ہند سے کیا گیا جس نے خشکی میں اپنے ہدف کو کامیابی سے نشانہ بنایا۔ جدید ٹیکنالوجی سے لیس کروز میزائل بابر تھری 450 کلو میٹر تک اپنے ہدف کو کامیابی سے نشانہ بنانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ یہ میزائل زیر سمندر موبائل پلیٹ فارم سے لانچ کیا گیا تھا۔ میزائل بابر تھری کئی قسم کے جنگی ہتھیار لے جانے کی صلاحیت رکھتا ہے اور نچلی پرواز کرسکتا ہے۔

پاک بحریہ کی مشقیں ’امن -2017‘

بحیرہ عرب میں جاری پاک بحریہ کی کثیرالقومی مشقوں ’امن-2017‘ کے دوران دشمنوں کے حملوں کو ناکام بنانے کی مشقیں کی گئیں امن مشقوں میں امریکا، برطانیہ، سری لنکا، فرانس اور ملائیشیا سمیت دنیا کے 35 سے زائد ممالک کی بحری افواج شامل ہے۔ پاکستان بحریہ امن مشقوں کا انعقاد پر 2 سال بعد کرتی ہے، جب کہ یہ مسلسل چھٹی اور تاریخ کی سب سے بڑی امن مشقیں ہیں۔ بحریہ کی امن مشقوں کا مقصد دشمن کی جانب سے سمندری حملوں کا مقابلہ کرنا، ملکی سمندری حدود سمیت دیگر سرحدوں کی حفاظت کو یقینی بنانا اور امن کو فروغ دینا ہے۔

پاکستان کا آبدوز سے کروز میزائل بابر تھری کا کامیاب تجربہ

پاکستانی فوج نے اعلان کیا ہے کہ آبدوز سے کروز میزائل ‘بابر تھری’ کا کامیاب تجربہ کرلیا گیا ہے۔ پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آر کے مطابق بابر تھری کروز میزائل کا تجربہ بحیرہ ہند سے کیا گیا جس نے خشکی میں اپنے ہدف کو کامیابی سے نشانہ بنایا۔ جدید ٹیکنالوجی سے لیس کروز میزائل بابر تھری 450 کلو میٹر تک اپنے ہدف کو کامیابی سے نشانہ بنانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ یہ میزائل زیر سمندر موبائل پلیٹ فارم سے لانچ کیا گیا تھا۔ بیان میں مزید کہا گیا کہ میزائل بابر تھری کئی قسم کے جنگی ہتھیار لے جانے کی صلاحیت رکھتا ہے اور نچلی پرواز کرسکتا ہے۔
کامیاب تجربے پر چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی جنرل زبیر محمود حیات، ڈی جی سٹرٹیجک پلان ڈویژن لیفٹیننٹ مظہر جمیل اور دیگر سینیئر افسران نے میزائل ٹیسٹ کے تجربے کا مشاہدہ کیا۔ یاد رہے کہ گذشتہ سال دسمبر میں پاکستان نے زمین اور سمندر میں 700 کلومیٹر تک اپنے ہدف کو نشانہ بنانے والے کروز میزائل ‘بابر ٹو’ کا بھی کامیاب تجربہ کیا تھا۔ آئی ایس پی آر کا کہنا تھا کہ مقامی طور پر تیار کردہ کروز میزائل زمین اور سمندر میں 700 کلو میٹر تک اپنے ہدف کو نشانہ بنانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔