پاک بحریہ کا دیسی ساختہ کروز میزائل ’حربہ‘ کا کامیاب تجربہ

پاک بحریہ میں حال ہی میں شامل کی جانے والی فاسٹ اٹیک کرافٹ (میزائل ) پی این ایس ہمت نے شمالی بحیرئہ عرب میں لائیو ویپن فائرنگ کا شاندار مظاہرہ کیا۔ پی این ایس ہمت نے اندرون ملک تیار کردہ حربہ نیول کروز میزائل فائر کیا ʼ جو سطح آب سے سطح آب پر مار کرنے والا اینٹی شپ اور زمینی حملے کی صلاحیت کا حامل میزائل ہے۔ میزائل نے اپنے ہدف کو پوری کامیابی سے نشانہ بنایا جو اس ویپن سسٹم کی حربی صلاحیت کا واضح ثبوت ہے۔ لائیو ویپن فائرنگ کا یہ کامیاب مظاہرہ نہ صرف پاک بحریہ کی فائر پاور کی قابل اعتماد اور بھرپور صلاحیت کا مظہر ہے بلکہ پاکستا ن کی دفاعی صنعت کی اندرون ملک ہائی ٹیک ہتھیار سازی کی معیاری صلاحیت کا عکاس ہے اوراس شعبے میں خود انحصاری کے حصول کے لیے حکومتی عزم کی واضح دلیل ہے۔

Advertisements

پاک بحریہ کا جہاز شکن میزائل کا کامیاب تجربہ

پاکستانی بحریہ نے سنیچر کو شمالی بحیرہِ عرب میں بحری جہاز شکن فضا سے سمندر میں مار کرنے والے میزائل کا کامیاب مظاہرہ کیا ہے۔ ریڈیو پاکستان کے مطابق پاکستانی بحریہ کے ترجمان نے بتایا کہ سی کنگ ہیلی کاپٹر نے کھلے سمندر میں یہ مظاہرہ کیا اور کامیابی سے ہدف کو نشانہ بنایا۔ اس موقعے پر پاکستانی بحریہ کے سربراہ محمد زکا اللہ نے مظاہرے کا جائزہ لیا۔ ان کا کہنا تھا سی کنگ ہیلی کاپٹر سے میزائل کا کامیاب مظاہرہ پاکستانی بحریہ کی پیشہ وارانہ صلاحیتوں اور جنگی تیاری کا واضح ثبوت ہے۔

انھوں نے کہا کہ پاکستانی بحریہ اپنے وطن کی سالمیت اور مفادات کا ہر قیمت ہر دفاع کرے گی۔ یاد رہے کہ اس سال کے آغاز میں پاکستانی بحریہ نے آبدوز سے کروز میزائل ‘بابر تھری’ کا کامیاب تجربہ کیا تھا۔ بابر تھری کروز میزائل کا تجربہ بحیرہ ہند سے کیا گیا جس نے خشکی میں اپنے ہدف کو کامیابی سے نشانہ بنایا۔ جدید ٹیکنالوجی سے لیس کروز میزائل بابر تھری 450 کلو میٹر تک اپنے ہدف کو کامیابی سے نشانہ بنانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ یہ میزائل زیر سمندر موبائل پلیٹ فارم سے لانچ کیا گیا تھا۔ میزائل بابر تھری کئی قسم کے جنگی ہتھیار لے جانے کی صلاحیت رکھتا ہے اور نچلی پرواز کرسکتا ہے۔

پاک بحریہ کی مشقیں ’امن -2017‘

بحیرہ عرب میں جاری پاک بحریہ کی کثیرالقومی مشقوں ’امن-2017‘ کے دوران دشمنوں کے حملوں کو ناکام بنانے کی مشقیں کی گئیں امن مشقوں میں امریکا، برطانیہ، سری لنکا، فرانس اور ملائیشیا سمیت دنیا کے 35 سے زائد ممالک کی بحری افواج شامل ہے۔ پاکستان بحریہ امن مشقوں کا انعقاد پر 2 سال بعد کرتی ہے، جب کہ یہ مسلسل چھٹی اور تاریخ کی سب سے بڑی امن مشقیں ہیں۔ بحریہ کی امن مشقوں کا مقصد دشمن کی جانب سے سمندری حملوں کا مقابلہ کرنا، ملکی سمندری حدود سمیت دیگر سرحدوں کی حفاظت کو یقینی بنانا اور امن کو فروغ دینا ہے۔

پاکستان کا آبدوز سے کروز میزائل بابر تھری کا کامیاب تجربہ

پاکستانی فوج نے اعلان کیا ہے کہ آبدوز سے کروز میزائل ‘بابر تھری’ کا کامیاب تجربہ کرلیا گیا ہے۔ پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آر کے مطابق بابر تھری کروز میزائل کا تجربہ بحیرہ ہند سے کیا گیا جس نے خشکی میں اپنے ہدف کو کامیابی سے نشانہ بنایا۔ جدید ٹیکنالوجی سے لیس کروز میزائل بابر تھری 450 کلو میٹر تک اپنے ہدف کو کامیابی سے نشانہ بنانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ یہ میزائل زیر سمندر موبائل پلیٹ فارم سے لانچ کیا گیا تھا۔ بیان میں مزید کہا گیا کہ میزائل بابر تھری کئی قسم کے جنگی ہتھیار لے جانے کی صلاحیت رکھتا ہے اور نچلی پرواز کرسکتا ہے۔
کامیاب تجربے پر چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی جنرل زبیر محمود حیات، ڈی جی سٹرٹیجک پلان ڈویژن لیفٹیننٹ مظہر جمیل اور دیگر سینیئر افسران نے میزائل ٹیسٹ کے تجربے کا مشاہدہ کیا۔ یاد رہے کہ گذشتہ سال دسمبر میں پاکستان نے زمین اور سمندر میں 700 کلومیٹر تک اپنے ہدف کو نشانہ بنانے والے کروز میزائل ‘بابر ٹو’ کا بھی کامیاب تجربہ کیا تھا۔ آئی ایس پی آر کا کہنا تھا کہ مقامی طور پر تیار کردہ کروز میزائل زمین اور سمندر میں 700 کلو میٹر تک اپنے ہدف کو نشانہ بنانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

مشترکہ بحری مشق کیلیے ترکش نیول شپ کی پاکستان آمد

کراچی پورٹ پر پاك بحريہ كے سينئر افسران اور ترك سفارت خانے  كے عملے نے جہاز كا پر تپاك خير مقد م كيا۔

Iran, Pakistan Carrying Out Joint Navy Drills in Arabian Sea

Iranian naval fleet docked at the Karachi port  on a three-day visit to hold discussions on the regional political situation and matters of mutual interest, said a statement issued by Pakistan Navy. Four Iranian Naval Ships — Lavan, Konarak, Falakhen and Khanjar — were received by the senior officials of Pakistan Navy and Iranian diplomats at the docks, the statement added. “During the visit, the naval forces of both the countries will undertake joint drills in the Pakistani waters for three days.” Iranian naval vessels are on visit to Pakistan for the joint drills ahead of ‘Aman-17’ exercise, which the Pakistan Navy will host early next year. Operational training activities and sports activities are also planned, said the statement by Pakistan Navy. The visit of Iranian fleet is expected to promote peace and security in the region and enhance maritime collaboration between the two brotherly Islamic countries, read the statement. The naval forces of Russia, China, Turkey and Iran are expected to participate in the annual international naval exercise ‘Aman-17’ next year. The objective of the exercise is to exchange naval experiences and improve regional security. The visit of Iranian fleet is expected to enhance maritime collaboration between the two brotherly Islamic countries. —Photo courtesy Pak Navy

The graduation of the Pakistan Naval Academy

Vice Admiral Abdullah S. Al-Sultan, chief of naval staff of the Royal Saudi Naval Forces, attends the graduation of the Pakistan Naval Academy in Karachi, Pakistan. Al-Sultan (2nd right in first picture and center in 2nd picture) had earlier been conferred the Nishan-e-Imtiaz, or the “Order of Excellence,” one of Pakistan’s top military decorations, in recognition of his outstanding services at the Saudi navy and his rich contribution toward bringing the naval forces of Pakistan and Saudi Arabia closer together for the safety and security in the region.