اسلامی عسکری اتحاد رکن ممالک کی معاونت کرے گا، جنرل راحیل

سعودی عرب کے ولی عہد محمد بن سلمان نے سعودی سربراہی میں دہشت گردی کے خلاف مسلم اتحاد کے پہلے اعلیٰ سطحی اجلاس کا افتتاح کر دیا۔ اسلامک ملٹری کاؤنٹر ٹیرارزم کولیشن (آئی سی ایم سی ٹی سی) کے ‘دہشت گردی کے خلاف اتحاد’ کے عنوان سے افتتاحی اجلاس میں رکن ممالک کے وزراء دفاع نے حصہ لیا۔ پاک فوج کے سابق سربراہ اور عسکری اتحاد کے کمانڈر جنرل راحیل شریف نے اس موقع پر کہا کہ ‘ہمارے کئی رکن ممالک دہشت گرد تنظیموں کے خلاف لڑنے کے لیے مسلح فوج اور قانون نافذ کرنے والی ایجنسیوں کی صلاحیت میں کمی کے باعث شدید دباؤ میں ہیں’۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘آئی ایم سی ٹی سی رکن ممالک کو اپنی ریاستوں میں انسداد دہشت گردی کارروائی کے لیے خفیہ معلومات کی ترسیل اور صلاحیت کو بہتر بنانے میں معاونت کے لیے ایک پلیٹ فارم کے طور پر کردار ادا کرے گا’۔ سعودی ولی عہد محمد بن سلمان نے عسکری اتحاد کے وزراء دفاع اور دیگر اعلیٰ حکام سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ‘اس اجلاس سے ایک مضبوط اشارہ دیا گیا ہے کہ ہم ایک دوسرے کی مدد کے لیے رابطے اور متحد ہو کر کام کرنے جا رہے ہیں’۔  سعودی ولی عہد کا کہنا تھا کہ ‘اس دہشت گردی اور انتہا پسندی سے سب سے زیادہ خطرہ ہمارے مقدس دین کی مقبولیت کو ہے اس لیے ہم کسی کو ایسا کرنے کی اجازت نہیں دیں گے’۔ انھوں نے کہا کہ ‘ہم آج سے اس دہشت گردی کو ختم کرنے کا آغاز کرتے ہیں اور ہمیں مختلف پہلووں، دنیا اور بالخصوص مسلم ممالک سے اس کا خاتمہ نظر آتا ہے اور ہم اس کی شکست تک اپنی کوششوں کو جاری رکھیں گے’۔

یاد رہے کہ ’41 ملکی پان اسلامی اتحاد’ کے نام سے نئے اتحاد کا اعلان دسمبر 2015 میں کیا گیا تھا۔ پاکستان 34 ممالک کی ابتدائی فہرست میں شامل تھا جو اس اتحاد کا حصہ بننے پر متفق تھے۔ جنرل راحیل شریف اس اتحاد کے کمانڈر کے طور پر رواں سال اپریل میں شامل ہوئے تھے اور آئی ایم سی ٹی سی کے مطابق سابق آرمی چیف عسکری معاملات کو دیکھیں گے جس کا مقصد رابطوں، وسائل اور انسداد دہشت گردی کی کارروائیوں کے لیے عسکری منصوبہ بندی کے علاوہ اطلاعات کی محفوظ ترسیل اور فوجی صلاحیت اور قابلیت کو بڑھانے میں مدد کرنا ہے’۔ اسلامی عسکری اتحاد کے بنیادی مقاصد میں نظریات، مواصلات، انسداد دہشت گردی کے لیے مالی تعاون اور فوج کو شامل کیا گیا ہے۔

Advertisements

پاکستانی فوج : انڈیا ہمارا عزم آزمانا چاہتا ہے تو آزما لے اس کا نتیجہ وہ خود دیکھے گا

پاکستانی فوج کے ادارے آئی ایس پی آر کے ڈائریکٹر جنرل میجر جنرل آصف غفور نے کہا ہے کہ انڈیا کو جو چیز روک رہی ہے وہ ہماری قابل بھروسہ جوہری صلاحیت ہے تاہم وہ ہمارا عزم آزمانا چاہتا ہے تو آزما لے لیکن اس کا نتیجہ وہ خود دیکھے گا۔ پاکستان کے سرکاری ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے میجر جنرل آصف غفور نے کہا ‘چیف آف آرمی سٹاف ایک انتہائی اہم تقرری ہوتی ہے اور فور سٹار وہ رینک ہے جس میں تمام عمر کا تجربہ اور پختگی شامل ہوتی ہے، لہٰذا اس قسم کا غیر ذمہ دارانہ بیان اتنے اہم اور ذمہ دار عہدے والے افسر کو زیب نہیں دیتا ہے۔‘

ایک سوال کے جواب میں میجر جنرل آصف غفور نے کہا ‘انڈیا ہمارا عزم آزمانا چاہتا ہے تو آزما لے لیکن اس کا نتیجہ وہ خود دیکھے گا۔ پاکستان کی جوہری صلاحیت مشرق کی جانب سے آنے والے خطرات کے لیے ہے، جبکہ پاکستان کی جوہری صلاحیت حملے کے لیے نہیں بلکہ دفاع کے لیے ہے۔‘ ڈی جی آئی ایس پی آر نے پاکستان کو جوہری دھوکا کہنے کے انڈین آرمی چیف کے بیان کو بچکانہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ ایک ذمہ دار افسر کی جانب سے ایسا غیر ذمہ دارانہ بیان انتہائی نامناسب ہے۔

واضح رہے کہ انڈیا کے آرمی چیف نے ایک بیان میں کہا تھا کہ اگر حکومت نے حکم دیا تو انڈین آرمی سرحد پار کر کے پاکستان میں آپریشن کرنے سے نہیں ہچکچائے گی۔ ‘پاکستان کی جوہری صلاحیت ایک فریب ہے، اگر ہمیں واقعی پاکستانیوں کا سامنا کرنا پڑا اور ہمیں یہ ٹاسک دیا گیا تو ہمیں یہ نہیں کہیں گے کہ چونکہ پاکستان کے پاس جوہری ہتھیار ہیں اس لیے ہم سرحد پار نہیں کر سکتے۔‘ ڈی جی آئی ایس پی آر کا کہنا تھا ‘اگر انڈیا روایتی طریقوں سے پاکستان پر غالب آنے کی صلاحیت رکھتا تو اب تک ایسا کر چکا ہوتا، انڈیا کو جو چیز روک رہی ہے وہ ہماری قابل بھروسہ جوہری صلاحیت ہی ہے۔‘

میجر جنرل آصف غفور نے کہا ‘ہم ایک پیشہ ورانہ آرمی، ذمہ دار جوہری ریاست اور بیدار قوم ہیں، جو کسی فریب کا شکار نہیں ہے۔‘ دوسری جانب پاکستان کے وزیر خارجہ خواجہ آصف نے انڈین آرمی چیف کے بیان کو جوہری تصادم کو دعوت دینے کے برابر قرار دے دیا۔ سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر ٹویٹ کرتے ہوئے خواجہ آصف نے کہا ‘انڈین آرمی چیف نے انتہائی غیر ذمہ دارانہ بیان دیا جو ان کے عہدے کو زیب نہیں دیتا، تاہم اگر انڈیا کی خواہش ہے تو ہمارے عزم کو آزما لے، انشاء اللہ بھارتی جنرل کا شک دور کر دیا جائے گا۔’

کوئی طاقت پاکستان کا بال بیکا نہیں کر سکتی، آرمی چیف

پاک فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا ہے کہ دھمکانے والے سن لیں جس ملک میں عظیم والدین اور بہادر بیٹے ہوں کوئی بھی اس کا بال بیکا نہیں کر سکتا، ایسی فوج کا سربراہ ہوں جس کے جوان ہر دم وطن کیلئے جان دینے کو تیار ہیں، کوئی رقم ان بہادروں کی حب الوطنی اور قربانیوں کی قیمت نہیں چکا سکتی، ہمارے شہداء کی قربانیاں ہی ہمیں پر امن اور مستحکم پاکستان کی جانب لے جا رہی ہیں ۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے کرک کے علاقے گڑھ خیل میں مادر وطن پر 3 بیٹے اور 2 بھتیجے قربان کرنیوالے محمدعلی خان کے گھر آمد کے موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کیا اور انہیں زبردست خراج تحسین پیش کیا.

جبکہ اپنے دورہ شمالی وزیرستان میں آرمی چیف نے پاک افغان سرحد میں حال ہی میں تعمیر قلعوں اور نصب کی گئی آہنی باڑ کا جائزہ لیا اور میرانشاہ میں یادگار شہدأ پر حاضری دی اور پھولوں کی چادر چڑھائی۔ تفصیلات کے مطابق پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر ) کے مطابق پاک فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے شمالی وزیر ستان ایجنسی کا دورہ کیا اور میرانشاہ میں شہداء یادگار پر حاضری دی اور پھولوں کی چادر چڑھائی۔ جنرل آفیسر کمانڈنگ (جی او سی) میرانشاہ نے سلامتی کی صورتحال‘ عارضی طور پر نقل مکانی کرنے والے افراد کی بحالی کے لئے ایجنسی میں سماجی اقتصادی ترقی کے منصوبوں کے حوالے سے بریفنگ دی ۔

پاک فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے پاک افغان سرحد میں حال ہی میں تیار کیے گئے قلعوں اور نصب کی گئی آہنی باڑ کے جائزہ کے لئے دورہ کیا۔ جنرل قمر جاوید باجوہ نے سرحدی سکیورٹی کے لئے فارمیشن کی جانب سے تیز رفتاری کیلئے معیاری کام کرنے کے عمل کو سراہا۔ کور کمانڈر پشاور لیفٹیننٹ جنرل (ر) نذیر احمد بٹ بھی اس موقع پر موجود تھے ۔ بعد ازاں آرمی چیف شمالی وزیرستان کے دورے کے دوران کرک کے علاقے گڑھ خیل میں محمد علی خان کے گھر پہنچے، ان کے 6 بچے پاک فوج کا حصہ رہے ٗ3 نے مادر وطن کیلئے جام شہادت نوش کیا ان کے 2 بھتیجے بھی شہید ہو چکے۔ آئی ایس پی آر کے مطابق آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا کہ پاکستان کو دھمکانے والی بیرونی قوتیں سمجھ لیں ،جس قوم کے پاس ایسے والدین اور بچے ہوں ان کا کوئی بال بیکا بھی نہیں کر سکتا ۔

ان کا کہناتھاکہ وہ ایسی فوج کے چیف ہیں جس کے جوان ہر وقت ملک پر جان قربان کرنے کو تیار رہتے ہیں۔آرمی چیف نے کہا کہ کوئی رقم ان بہادروں کی حب الوطنی اور قربانیوں کی قیمت نہیں چکا سکتی ،ان کی قربانیاں ہی ہمیں پرامن اور مستحکم پاکستان کی طرف لے جارہی ہیں۔ جیو نیوز کے مطابق آئی ایس پی آر کا کہنا ہے کہ محمدعلی نےدورہ کرنےاورگاؤں کیلئے فلاحی پیکیج دینے پر آرمی چیف کا شکریہ ادا کیا۔

پاک بحریہ کا دیسی ساختہ کروز میزائل ’حربہ‘ کا کامیاب تجربہ

پاک بحریہ میں حال ہی میں شامل کی جانے والی فاسٹ اٹیک کرافٹ (میزائل ) پی این ایس ہمت نے شمالی بحیرئہ عرب میں لائیو ویپن فائرنگ کا شاندار مظاہرہ کیا۔ پی این ایس ہمت نے اندرون ملک تیار کردہ حربہ نیول کروز میزائل فائر کیا ʼ جو سطح آب سے سطح آب پر مار کرنے والا اینٹی شپ اور زمینی حملے کی صلاحیت کا حامل میزائل ہے۔ میزائل نے اپنے ہدف کو پوری کامیابی سے نشانہ بنایا جو اس ویپن سسٹم کی حربی صلاحیت کا واضح ثبوت ہے۔ لائیو ویپن فائرنگ کا یہ کامیاب مظاہرہ نہ صرف پاک بحریہ کی فائر پاور کی قابل اعتماد اور بھرپور صلاحیت کا مظہر ہے بلکہ پاکستا ن کی دفاعی صنعت کی اندرون ملک ہائی ٹیک ہتھیار سازی کی معیاری صلاحیت کا عکاس ہے اوراس شعبے میں خود انحصاری کے حصول کے لیے حکومتی عزم کی واضح دلیل ہے۔